”حالات اتنے خراب ہیں کہ ہر کوئی پریشان ہے“

مشکلات اور پریشانیوں سے نجات کا وظیفہ: قرآن کریم کو پڑھیں۔ سمجھیں اور عمل کریں ۔ تو یہی سبق ملتا ہے کہ انسان پر آنے والی مصیبتیں اس کے اعمال کا کیا دھرا ہیں۔ رب العالمین تو بے پناہ رحم فرماتے ہیں۔ خالق کائنات تو بار بار بخشتے ہیں۔ یہ انسان ہی ناشکرا بھی ہے۔ جلد باز بھی ہے۔ احسان فراموش بھی ہے۔ بہت

جلد بھولنے والا بھی ہے۔ بدلہ لینے والا بھی ہے۔ خیانت بھی کرتا ہے۔ غرور تکبر بھی کرتا ہے۔حق مارتا ہے، ظلم کرتا ہے، یتیموں مسکینوں کے ساتھ زیادتی کرتا ہے، ناپ تول میں کمی کرتا ہے، والدین، بہن بھائیوں، رشتہ داروں اور ہمسایوں کے حقوق ادا نہیں کرتا اس کے علاوہ بھی ہر قدم پر اتنی غلطیاں کرتا ہے کہ شمار سے باہر ہیں۔ اتنی غلطیوں کے باوجود بھی اگر انسان یہ کہے کہ ہر آنے والی مصیبت میں اس کا کوئی کردار نہیں تو یہ نہایت غلط ہے۔قرآن کریم میں اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے کہ ترجمہ اس تحریر میں سورہ نصر کا ایک ایسا خاص عمل پیش کیا جارہا ہے جس کے کرنے سے انشاء اللہ آپ اللہ رب العزت سے جو دعا مانگیں گے اللہ رب العزت آپ کی ہر دعا کو قبول فرمائیں گے آپ کو کامیابیاں ہی کامیابیاں عطافرمائیں گے لیکن سورہ نصر کا یہ خاص عمل جاننے سے قبل آپ سے درخواست ہے کہ درود پاک پڑھ لیجئے اور پاک صاف ہوجائیے۔ زندگی میں ہر قسم کی کامیابی حاصل کرنے کے لئے ہر قسم کی پریشانیوں سے نجات کے لئے ہر قسم کی مشکلات کے حل کے لئے سورۃ النصر کا وظیفہ بہت ہی مجرب ہے سورہ نصر کا وظیفہ کرنے والوں کو زندگی کی سب سے بڑی کامیابی

کیسے مل جاتی ہے ؟سورہ نصر کی پہلی آیت اذا جاء نصراللہ کے لفظ نصر کو اس سورت کا نام قرار دیا گیا ہے اس سورت سورۃ النصر کو پڑھنے سے آپ کے لئے ہر میدان میں کامیابی کے دروازے کھلیں گے اور لکھا ہے کہ اس سورت کو ہر روز سات مرتبہ پڑھنے سے انشاء اللہ ہر ب لا سے ہر مصیبت سے محفوظ رہے گا اور فتح اور مدد میسر ہوگی اور اگر کوئی اس سورت کو روزانہ پڑھے تو دشمن پر فتح یابی حاصل کرے گا اور اگر کوئی اس سورت کو رنگ پر کنندہ کر کے جال میں لگا دے۔ تو اس جال میں مچھلیاں بھی خوب آئیں گے سورۃ النصر کے مزید خواص اور فضائل احادیث میں وار د ہوئے ہیں ۔تقریبا ہر مسلمان کو یہ سورت زبانی یاد بھی ہوگی ۔ ترجمہ ہے جب خدا کی مدد اور کامیابی آن پہنچی اور آپ دیکھیں گے کہ لوگ گروہ در گروہ خدا کے دین میں داخل ہورہے ہیں پس تم اپنے پروردگار کی تسبیح اور حمد و ثنا بیان کرو اور اس سے استغفار کرو کہ وہ بڑا ہی توبہ قبول کرنے والا ہے۔حضرت ابن عباس ؓ کا بیان ہےکہ یہ قرآن مجید کی آخری سورت ہے یعنی اس کے بعد کوئی بھی مکمل سورت حضور پاک پر نازل نہیں ہوئی اور مسند احمد میں ہے کہ جب یہ سورت مبارکہ نازل ہوئی تو حضور نبی کریم نے فرمایا کہ مجھے میری وفات کی خبر دے دی گئی ام المومنین حضرت ام حبیبہ ؓ فرماتی ہیں کہ جب یہ سورت مبارکہ نازل ہوئی تو

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *