”لائیو پروگرام میں شاہد خاقان عباسی نے حیران کن بات کہہ دی“

کراچی (ویب ڈیسیک) سابق وزیراعظم اور رہنما پاکستان مسلم لیگ ن شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ ہم نے آئین کے دفاع کا حلف اٹھایا ہے ہم پر لازم ہے کہ ہم آئین کا دفاع کریں اگر ہم کمپرومائز آئین شکنی سے کریں گے ڈیل کرکے اقتدار میں آئیں گے تو پھر معاملہ خراب ہوتا ہے میں ایک ہی بات کہوں گا کہ جس تنخواہ پر

 

 

 

 

اس وقت عمران خان کام کررہے ہیں اس پر مسلم لیگ کام نہیں کرسکتی ، الیکشن حکمت عملی جس کا ذکر شہباز شریف نے کیا وہ ہی جانتے ہیں ، ہمیں صرف پارٹی فیصلوں پرعمل کرنا ہوتا ہے ، ملکی حالات بہت تلخ ہیں ، حقائق کمیشن بننا چاہئے۔ وہ نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں میزبان سلیم صافی سے گفتگو کررہے تھے ۔ سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ پارٹی کا موقف واضح ہے کہ ہم ملک میں آئین کی حکمرانی چاہتے ہیں ،ملک کا نظام آئین کے مطابق چاہتے ہیں ۔ شہباز شریف کے حالیہ بیان کہ نواز شریف چوتھی بار وزیراعظم ہوتے کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں شاہد خاقان عباسی نے کہا شہباز شریف میرے بھائی ، میرے لیڈر ، میرے دوست ہیں وہ پارٹی کے صدر ہیں ، پارٹی کا صدر وہ معاملات جانتے ہیں جو دیگر کے علم میں نہیں ہوتے ۔ تاہم جو شہباز شریف نے جو جرگہ میں کہا وہ پہلے بھی کہہ چکے ہیں اب وہ کیا حکمت عملی تھی یہ شہباز شریف ہی جانتے ہیں مجھے اس کا علم نہیں ہے ۔ نواز شریف کو چھوڑ نے پر دوبارہ وزیراعظم بنائے جانے کی آفر کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں شاہد خاقان عباسی نے کہا تمام فیصلے پارٹی کرتی ہے اور جو بھی فیصلے ہیں وہ پارٹی ہی نے کرنے ہوتے ہیں ہم نے ان پر عمل کرنا ہوتا ہے ۔ انہوں نے

 

 

 

 

کہا کہ جس چیز کی آئین میں گنجائش نہ ہو اس کی بات کرنا فضول ہے ۔ نواز شریف کی سرجری ممکن ہے تاہم ابھی مسئلہ ویزے میں توسیع کا آگیا۔ ایک سوال کے جواب میں شاہد خاقان عباسی نے کہا بیمار آدمی سیاسی حوالے سے بات بھی کرسکتا ہے اور پارک میں جاسکتا ہے اس پر اس کی کوئی پابندی نہیں ہے ۔ آرمی چیف کی توسیع کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں سابق وزیراعظم نے کہا ہم نے تو خوشی میں ووٹ دیا میں اس وقت جیل میں تھا لیکن جو فیصلہ پارٹی کرتی ہے وہ میرا بھی فیصلہ تھا ۔ ہم آئین کے لئے لڑنے کے لئے بھی تیار ہیں اور جھکنے کے لئے بھی تیار ہیں

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.