پہلے آئیں پہلے پائیں ،اسلام آبادسیکٹر E/11میں 1سو روپے فی کنال کے حساب سے لوٹ سیل لگ گئی ،پاکستانی حیران ، پریشان

پہلے آئیں پہلے پائیں ،اسلام آبادسیکٹر E/11میں 1سو روپے فی کنال کے حساب سے لوٹ سیل لگ گئی ،پاکستانی حیران ، پریشان اسلام آباد(نیو ڈیسک)سینئرصحافی و نامور تجزیہ کار رؤف کلاسرا نے انکشاف کیا ہے کہ ای الیون نیشنل پولیس فاؤنڈیشن میں غیر قانونی طریقے سے پلاٹس حاصل کرنیوالوں میں سیٹھ، بیوروکریٹس، پولیس

 

 

 

 

 

افسران اور متعدد فوجی افسران شامل ہیں ،ایک ایک افسر نے اپنے بیٹے بیٹیوں، بیگمات اور رشتہ داروں کے نام پر متعدد پلاٹس ہتھیائے ۔نجی ٹی وی کے ایک پروگرا م میں رؤف کلاسر نے انکشاف کیا کہ ای لیون میں نیشنل پولیس فاؤنڈیشن بنائی گئی تھی جس کا مقصد چھوٹے رینک کے اہلکاروں اور پولیس محکمے کے شہدا کو گھر وں کی فراہمی تھا، بالخصوص ان اہلکاروں کو یہ سہولت دی گئی جن کے پاس رہنے کیلئے اپنا گھر نہیں تھا مگر جیسے ہی ای الیون میں یہ پراجیکٹ شروع ہوا تو بڑے بڑے افسران بھی وہاں پہنچ گئے اورکہا ہمارا بھی حصہ دیں ، ایک ایک افسر نے کئی کئی پلاٹس لئے ،بعض نے تو اپنے بیٹے ، بیٹی ،ساس سمیت دیگر رشتہ داروں کے نام پر بھی پلاٹ لئے ہیں ۔ایک افسر نے تو 12پلاٹس بھی لئے ہیں ،ای الیون کا پلاٹ پانچ کروڑ روپے کا ہے اور یہ پلاٹ 100روپے فی کنال میں بھی الاٹ ہوتے رہے ہیں ۔ایک ملازم نے اپنی فیملی میں بارہ پلاٹس الاٹ کرائے ہیں ۔یہاں تک سابق وزیراعظم شوکت عزیز نے کروڑوں روپے مالیت کے دو پلاٹس تقریبا 13لاکھ میں لئے ۔رائوف کلاسر نے مزید انکشافات کیے کہ آئی جی اور سابق ایم ڈی نیشنل پولیس فائونڈیشن میاں محمد امین ہی کی بیٹی ،داماد اور داماد کی والدہ نے تین پلاٹس لئے ۔ڈی آئی جی لئیق احمد خان نے دو پلاٹس لئے اور ان

 

 

 

 

 

کے بیٹے ،بیٹی اور اہلیہ نے بھی تین پلاٹس لئے ۔اس کے علاوہ ڈی آئی جی سکندر حیات شاہین ، ان کی اہلیہ رفعت شاہین، دو بیٹیوں فاطمہ شاہین اور ڈاکٹر آمنہ شاہین اور رشتہ دار محمد خاور نے پانچ پلاٹس لئے ۔نیشنل پولیس فائونڈیشن کے سابقہ ایڈیشنل ڈائریکٹر عبدالحنان نے اپنے سمیت چار بیٹوں اور ایک بیٹی کے نام پر سات پلاٹس لئے ،اس کے علاوہ آئی جی پولیس ایم محسن اور ان کے بیٹے اور بیٹی نے 4پلاٹس لئے ،سابق ایم ڈی نیشنل پولیس فائونڈیشن میاں محمد امین کے تین بیٹوں نے تین پلاٹس غیر قانونی طورپر ہتھیائے ۔رائوف کلاسرا نے انکشاف کیا کہ نیشنل پولیس فائونڈیشن کے پلاٹس جنرل ، کرنل ،بریگیڈیئرز نے بھی پلاٹس لئے ہیں اور ان لوگوں کا پولیس سے کوئی تعلق نہیں تھا پھر بھی انہوں نے لوٹ سیل کی ۔بریگیڈیئر زاہد وحید بٹ اور ان کی اہلیہ نے ظل ہما نے دو پلاٹس لئے ،لیفٹیننٹ کرنل محمد افضل رانا نے دو پلاٹس لئے ،اس کے علاوہ فارن آفس والے بھی اس لوٹ مار میں پیچھے نہیں رہے اور فارن آفس کے افسر آغاز باقر اور اس کے بیٹے نے دو پلاٹس لئے ،اس کے علاوہ فارن سروس کے دو ملازمین بشیر اور امجد نے دو پلاٹس لئے ۔انہوں نے انکشاف کیا کہ نیشنل پولیس فاؤنڈیشن کے ایک افسر خدا بخش نے اپنے بیٹے بیٹیوں ، بیگمات او ر رشتہ داروں کے نام پر 12پلاٹس لئے ۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.