ویرات کوہلی ایک اور ریکارڈ سے محروم ! بابر اعظم کے ساتھ محمد رضوان نے بھی شاندار اعزاز اپنے نام کر لیا

اسلام آباد (نیوز ڈیسک )پاکستان کرکٹ ٹیم کے کپتان بابر اعظم کےک بعد وکٹ کیپر محمد رضوان نے بھی ویرات کوہلی سے ریکارڈ چھین لیا ۔ پاکستانی وکٹ کیپر بیٹسمین کا بیٹنگ رن اوسط اب 52.66 ہے۔انہوں نے بھارتی کرکٹ ٹیم کے کپتان کوہلی کو پیچھے چھوڑا ہے جن کا رن اوسط 52.01 ہے۔قبل ازیں قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان بابر اعظم نے بھارتی کپتان ویرات

 

 

 

 

کوہلی کا ایک اور ریکارڈ توڑ دیا۔بابر اعظم بطور کپتان سب سے زیادہ ففٹی پلس اسکور کرنے والے پلیئر بن گئے ہیں انہوں نے نمیبیا کے خلاف ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کےمیچ میں نصف سنچری اسکور کی۔ بابر اعظم نے مجموعی طور پر 14 ففٹی پلس اسکور بطور کپتان بنائے ہیں ۔ واضح رہے کہ پاکستان کرکٹ ٹیم نے نمیبیا کو شکست دینے کے بعد سیمی فائنل میں کوالیفائی کرنے والی پہلی ٹیم بن گئی ہے ۔ پاکستان نے ٹی ٹوئنٹی میںسیمی فائنل کھیلنے کا اعزاز پانچویں بار اعزاز حاصل کیا ہے ۔ اس سے قبل پاکستان ٹیم 2007، 2009، 2010 اور 2012 میں مسلسل چار مرتبہ سیمی فائنل کھیل چکی ہے ۔ واضح رہے کہ پاکستانی ٹیم کپتان بابر اعظم اور محمد رضوان کی عمدہ بیٹنگ کی بدولت نمیبیا کو شکست دیکر ایونٹ میں لگاتار چوتھی کامیابی حاصل کرنے کے ساتھ سیمی فائنل کیلئے کوالیفائی کر نے والی پہلی ٹیم بن گئی ، پاکستانی ٹیم نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے مقررہ اوورز میں دو وکٹوں کے نقصان پر 189رنز بنائے ،نمیبیا کی ٹیم مقررہ اوورز میں 5 وکٹوں کے نقصان پر 144 رنز بناسکی ،محمد رضوان کو جارحانہ بیٹنگ پر میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا۔ منگل کو ابوظہبی میں کھیلے گئے سپر 12 راؤنڈ کے میچ میں پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا۔پاکستان نے اننگز کا آغاز کیا تو روبن ٹرمپیل مین نے عمدہ باؤلنگ کرتے ہوئے پہلا اوور میڈن کرایا اور یہ محمد رضوان نے ٹی20 کرکٹ میں میڈن اوور کرایا۔نمیبیا کے باؤلرز کی نپی تلی باؤلنگ کے سبب پاکستان کے اوپنرز بابر اعظم اور محمد رضوان کو بڑے شاٹس کھیلنے میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔10 اوورز کے بعد دونوں بلے بازوں نے

 

 

 

 

جارحانہ انداز اپنایا اور ٹیم کے بڑے اسکور کی بنیاد رکھی اور دو اوورز میں ایک رن دینے والے ٹرمپل مین کے تیسرے اوور میں 18رنز بٹورے۔پاکستان کے اوپنرز نے ایک اور مرتبہ بہترین کھیل پیش کرتے ہوئے پہلی وکٹ کیلئے سنچری شراکت قائم کی۔دونوں کھلاڑیوں نے ٹیم 113 رنز کا آغاز فراہم کیا جس کے بعد بابر اعظم پویلین لوٹ گئے، انہوں نے 49 گیندوں پر 7چوکوں کی مدد سے 70رنز کی اننگز کھیلی۔فخر زمان کا وکٹ پر قیام مختصر رہا اور وکٹوں کے عقب میں زین گرین نے شاندار کیچ لے کر انہیں پویلین رخصت کردیا۔دوسرے اینڈ پر موجود محمد رضوان نے بھی اپنی نصف مکمل کر لی جو ٹورنامنٹ میں ان کی دوسری ففٹی ہے۔پاکستان نے اننگز کے آخری اوور محمد رضوان کی جارحانہ بیٹنگ کی بدولت 24 رنز بنائے جس کی بدولت پاکستان نے مقررہ اوورز میں 2 وکٹوں کے نقصان پر 189 رنز بنائے۔محمد رضوان نے 50 گیندوں پر 4 چھکوں اور 8 چوکوں کی مدد سے 79رنز بنائے جبکہ محمد حفیظ نے 16 گیندوں پر 32 رنز بنائے۔حفیظ اور رضوان نے 26 گیندوں پر 67 رنز کی شراکت قائم کی اور پاکستان نے آخری 10 اوورز میں 130رنز بنائے۔نمیبیا نے ہدف کا تعاقب شروع کیا تو دوسرے ہی اوور میں حسن علی نے حریف ٹیم کے اوپنر مائیکل وین لنگن کو چلتا کردیا۔اسٹیفن بارڈ اور کریگ ولیمز نے 47 رنز کی شراکت قائم کی لیکن اسی مرحلے پر وکٹوں میں غلط فہمی کے نتیجے میں بارڈ سے 29 رنز کی اننگز بھی اختتام کو پہنچی۔پاکستان کو جلد ہی تیسری وکٹ لینے کا موقع ملا لیکن شاداب خان کی گیند پر شاہین شاہ آفریدی ایک آسان کیچ نہ لے سکے تاہم ایراسمس اس ڈراپ

 

 

 

 

کیچ کا فائدہ نہ اٹھا سکے اور اگلے ہی اوور میں عماد کی گیند پر ان کی اننگز اختتام کو پہنچی۔اسکور 93 تک پہنچا تو شاداب خان نے کریگ ولیمز کو آؤٹ کر کے میچ میں پہلی وکٹ حاصل کر لی جبکہ جے جے اسمٹس بھی صرف دو رنز بنا سکے۔اختتامی اوورز میں ڈیوڈ ویزے نے جارحانہ بیٹنگ کی لیکن ان کی یہ اننگز بھی نمیبیا کو شکست سے نہ بچا سکی، ویزے نے 31 گیندوں پر 43 رنز بنائے۔نمیبیا نے مقررہ اوورز میں 5 وکٹوں کے نقصان پر 144 رنز بنائے اور پاکستان نے میچ میں 45 رنز سے فتح حاصل کی۔پاکستان کی جانب سے حسن علی، حارث رؤف، شاہین شاہ آفریدی اور شاداب خان نے ایک، ایک وکٹ لی۔محمد رضوان کو جارحانہ بیٹنگ پر میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.