پاکستانی شلوار قمیض کیوں پہنتے ہیں ؟ مہوش حیات نے وجہ بتا دی

لاہور(نیوز ڈیسک )  اداکارہ مہوش حیات نے کہا ہے کہ 50 فی صد پاکستانی اپنا بڑھا ہوا پیٹ چھپانے کے لئے شلوار قیمض پہنتے ہیں ۔ اداکارہ نے عوام سے عمران خان کو مزید وقت دینے کے بھی اپیل کردی  ۔تفصیلات کے مطابق اداکارہ مہوش حیات نے نجی ٹی وی سے گفتگو میں کہا ہے کہ مجھے ایسا لگتا ہے کہ پچاس فی

 

 

 

 

صد پاکستانی صرف اپنے بڑھے ہوئے پیٹ کو چھپانے کے لئے شلوار قمیض کا سہارا لیتے ہیں ۔ ا ن کا کہنا تھا کہ شلوار قمیض پاکستان کا قومی لباس ہے لیکن اس کے ساتھ ہی یہ بڑھے ہوئے پیٹ کو بھی چھپا لیتا ہے ۔ٹی وی انٹرویو میں مہوش حیات کا کہنا تھا کہ آج کل اچھے سکرپٹ کم ہی آرہے ہیں اور جو آرہے ہیں ان میں رونے دھونے والے کریکٹرز ہیں اور میں فی الحال رونے دھونے والے رول نہیں کرنا چاہ رہی ۔مہوش حیات کا کہنا تھا کہ ان کی فلم ” پنجاب نہیں جاؤں گی ” ایک اچھی فلم تھی اور عوام نے اس کو بے حد پسند کیا تھا اب اسی پیٹرن پر ان کی اگلی گلم ” لندن نہیں جاؤں گا” پر کام ہورہا ہے اور امید ہے کہ عوام اس فلم کو پہلے سے زیادہ پسند کریں گے ۔ایک سوال کے جواب میں مہوش حیات نے کہا کہ جب عمران خان کو حکومت ملی تھی تو اس وقت حالات بہت خراب تھے ان کو ٹھیک کرنے میں ابھی وقت درکار ہے ۔ انہوں نے کہا کہ میں عوام سے اپیل کرتی ہوں کہ وہ حکومت کو بہتر کارکردگی دکھانے کے لئے ابھی مزید موقع دیں ۔ نیا پاکستان ابھی بننے کے عمل سے گذر رہا ہے ۔مہوش حیات نے کہا کہ عمران خان کے پاس کوئی جادو کی چھڑی تو ہے نہیں کہ وہ اس کو لہرائے اور سب کچھ ایک دم سے ٹھیک ہوجائے ۔ ملک کو ٹھیک کرنے کے لئے ہمیں خود بھی بہت کچھ کرنے کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کی بہتر پرفارمنس کے لئے پہلے سے موجود مسائل کو حل کرنا ضروری ہے ۔مہوش حیات نے کہا کہ میں مانتی ہوں کہ مہنگائی مسائل اورغربت ہیں لیکن کیا یہ پہلے نہیں تھے کیا یہ سب کچھ عمران خان حکومت نے کیا ہے ایسا نہیں ہے ۔ انہو ں نے کہا کہ ملک کو مسائل سے نکالنے اور حکومت کی بہترپرفارمنس کے لئے ضروری ہے کہ عمران خان کو ابھی اور وقت دیا جائے  ۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.