ایک دلچسپ اور معلوماتی رپورٹ

لاہور (خصوصی رپورٹ ) پاکستان دْنیا کا ایسا ملک ہے جہاں ہر 25 کلو میٹر بعد زْبان بدل جاتی ہے یہاں آپکو جون جولائی کی سخت گرمی میں اسلام آباد سے صرف دو ڈھائی سو کلومیٹر سفر کرنے پر برف باری مل سکتی ہے اور یہاں آپ کو دسمبر اور جنوری کی سخت سردی میں سندھ اور پنجاب کے کْچھ علاقوں میں

 

 

 

 

 

ایسی گرمی مل سکتی ہے کہ آپکے پسینے چھوٹ جائیں، پاکستان کا کلچر تو دور کی بات ہے یہاں کے ایک شہر کی بھینسیں دوسرے شہر کی بھینسوں سے مختلف ہیں۔ایسے دلچسپ مْلک میں ہر شہر کی اپنی ایک پہچان ہے جو اْسے دوسرے شہروں سے جْدا کرتی ہے۔ ہم پاکستان کے مختلف شہروں کی مشہور اور ایسی سوغاتوں کا ذکر کریں گے جن کی کوالٹی دْنیا میں اور کہیں نہیں پائی جاتی ۔مْلتانی سوہن حلوہ: کیا آپ جانتے ہیں مْلتانی سوہن حلوہ سب سے زیادہ پاکستان سے باہر کھایا جاتا ہے کیوں کے بیرون مْلک رہنے والے پاکستانی سالانہ ہزاروں من حلوہ پاکستان سے جاتے ہْوئے لیکر جاتے ہیں یا وہیں سے منگواتے ہیں اور دوست احباب کو یہ دودھ اور ڈرائی فروٹ سے بنا انتہائی لذیز حلوہ بطور سوغات تحفہ دیتے ہیں۔لاہور کی نان خطائی:ویسے تو لاہور بیشمار سوغاتوں کا شہر ہے لیکن ان سوغاتوں پر آجکل اندرون موچی دروازہ کا راج ہے جس کی نان خطائی لاہور سمیت ساری دْنیا میں مشہور ہے جو ایک بار کھاتا ہے پھر وہ بار بار کھاتا ہے۔میانوالی کے کھْسے اور چپلیں:میانوالی میں جْوتا آج بھی ہاتھ سے بنایا جاتا ہے اور یہاں کے کھْسے اور چپلیں اپنی خوبصورتی اور پائیداری کی وجہ سے ساری دْنیا کے پاکستانیوں میں انتہائی مقبول ہیں۔فیصل آباد کاٹن:آٹھ بازاروں کے شہر فیصل آباد میں پاکستان کی سب بڑی ٹیکسٹائل انڈسٹری موجود ہے جہاں دْنیا کی بہترین کاٹن، لان، بیڈ شیٹ اور پردے اور بیشمار چیزیں بہترین کوالٹی میں انتہائی سستے

 

 

 

 

 

داموں خریدی جاتی ہیں ۔ یہ سستی اور بہترین ٹیکسٹائل کی بہت بڑی مارکیٹ ہے۔وزیر آباد کے چمچے اور کانٹے:پاکستانی شہر وزیر آباد میں بننے والی سٹیل کی کٹلری کا شْمار دْنیا کی بہترین کٹلری میں ہوتا ہے جو ساری دْنیا کے بڑے بڑے ہوٹلز میں استعمال ہوتی ہے، اگر وزیر آباد جائیں تو وہاں کے چمچ اور کانٹے دیکھ کر اور اْن کی قیمت جان کر آپ مجبور ہو جائیں گے کہ اْنہیں خریدیں۔سیالکوٹ کے فٹبال:پاکستان فٹ بال کھیلنے میں تو پیچھے رہ گیا لیکن ساری دْنیا کے عظیم فٹ بالر فٹ بال پاکستان کا ہی پسند کرتے ہیں، سیالکوٹ شہر کئی سالوں سے فیفا کے ورلڈ کپ کے لیے فٹ بال بناتا آرہاہے اور نا صرف فٹ بال بلکہ یہاں کھیلوں کا دیگر سامان بھی انتہائی معیاری اور بہترین کاریگروں کے ہاتھ سے بنتا ہے اور ساری دْنیا میں مشہور ہے۔خیبر پختونخوا کی سوغاتیں:سوغاتوں کا صوبہ جہاں دنیا کے انتہائی قیمتی ہیروں سے لیکر بیشمار ایسی سوغاتیں ہیں جن کا مقابلہ دْنیا میں کہیں نہیں خاص طور پر سوات کے آڑو اور نایاب ٹراؤٹ مچھلی، پشاور کا چرسی تکہ جسے نہ صرف پاکستانی شوق سے کھاتے ہیں بلکے ساری دنیا کے سیاح چرسی تکہ کھاتے ہیں اور اْنگلیاں چاٹتے ہْوئے جاتے ہیں۔ پشاور کے چپلی کباب سوائے پشاور کے دنیا میں اور کہیں نہیں ملتے، اور مشہور زمانہ پشاوری چپل جسے ہاتھ سے بنایا جاتا ہے کاریگروں کی مہارت کا مْنہ بولتا ثبوت ہے اور اس صوبے کی مقبول ترین سوغات ہے۔شکار پْور کا اچار:سندھ کے شہر شکار پْور کا شکار پْوری

 

 

 

 

 

 

اچار جسے خاص شکار پْوری مصالحہ جات سے بنایا جاتا ہے ساری دْنیا کے پاکستانیوں میں انتہائی مقبول ہے اور اسے اْنگلیاں چاٹتے ہْوئے کھایا جاتا ہے، اس شہر میں آپ کو تقریباً ہر کھانے والی چیز کا اچار ملے گا یہاں تک کے گوشت کا اچار خاص طور پر چکن کا اچار انتہائی مزیدار ہے۔سندھ کے شہر خیر پْور کی بادام والی کھجوریں اور کھویا کھانے کے بعد آپ کو احساس ہوتا ہے کہ کھویا اور کھجور آج سے پہلے نہیں کھائی تھی، سندھ کے شہر ہالہ میں بنائی جانے والی سندھی ٹوپی اور اجرک سندھ کی پہچان ہے اور سندھ کی مشہور سوغات مانی جاتی ہے۔سندھ کے شہر لاڑکانہ کے امرود کھانے کے بعد شائد آپکو پھر کسی اور جگہ کے امرود اچھے نہ لگیں اور پاکستانیوں سمیت ساری دْنیا سارا سال اس صوبے کے آم پکنے کا انتظار کرتی ہے۔کوئٹہ کے سیب:پاکستان کا سب سے بڑا صوبہ بلوچستان بیشمار سوغاتوں سے بھرا پڑا ہے خاص طور پر زیارت کی بلیک چیری، کوئٹہ کے سیب اور اس صوبے کا ڈرائی فروٹ کھانے والوں کو ایسا ذائقہ دْنیا میں کہیں نہیں ملے گا۔گلگت بلتستان کی خوبانی:گلگت بلتستان پاکستان کا ایک ایسا صوبہ ہے جس کے بْلند بالا پہاڑ نوادرات و جواہرات سے بھرے ہْوئے ہیں اس صوبے میں پائی جانی والی ہر چیز ہی سوغات ہے خاص طور پر خوبانی جس کی 82 سے زیادہ اقسام اس صوبے میں پائی جاتی ہیں، آلو بْخارہ، چیری، بادام، اخروٹ اس صوبے کی پہچان ہیں، یہاں کے پہاڑوں پر اْگنے والا قہوہ ساری دْنیا میں انتہائی مقبول ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.